یروشلم فی القرآن؛ از شیخ عمران این حسین اردو ترجمہ باب اول
Muhammad Asif Raza 3 months ago
Muhammad Asif Raza #education

یروشلم فی القرآن؛ از شیخ عمران این حسین اردو ترجمہ باب اول

اسرائیل فلسطین تنازعہ تقریبا سو سال پرانا ہے اور حالیہ پیش رفت صرف اس کا پیش خیمہ ہے جس کی منصوبہ بندی بہت پہلے کی گئی تھی۔ شیخ عمران این حسین نے تقریباً دو عشرے قبل کتاب " یروشلم فی القرآن" لکھی تھی اور انہوں نے کہا کہ یہ کتاب آج سے قبل نہیں لکھی جا سکتی تھی، کیونکہ یہ صرف پچھلے چند سالوں میں یہودیوں کے پوشیدہ منصوبوں نے ان حالات کو واضع کیا ہے۔ آج تو حالات اس قدر واضح طور پر سامنے ہیں کہ بہت کم لوگ اس بات پر شک کر سکتے ہیں کہ دنیا پر تسلط کے لیے یہودیوں نے منصوبہ بنا رکھا ہے۔ صیہونی یہودیوں کے غلبہ میں ڈوبے میڈیا کی طرف سے پھیلائے جانے والے پروپیگنڈے پر متبادل رائے کے لیے ہم یہاں اس کتاب کے باب ا ول کو بینگ باکس آن لائن کے قارئین کے لیے شیئر کر رہے ہیں۔

یروشلم فی القرآن؛ از شیخ عمران این حسین اردو ترجمہ

حصہ اول

باب اول

تعارف

 

تحقیق تمہارے ہاں تمہارے رب کی طرف سے نشانیاں آ چکی ہیں، پھر جس نے دیکھ لیا تو خود ہی نفع اٹھایا، اور جو اندھا رہا سو اپنا نقصان کیا اور میں تمہارا نگہبان نہیں" ہوں۔"

قرآن، الانعام۶:۱۰۴

 

قرآن یروشلم کی تقدیر سمیت تمام چیزوں کی وضاحت کرتا ہے۔

قرآن نے اعلان کیا ہے کہ اس کا بنیادی کام تمام چیزوں کی وضاحت کرنا ہے:

 

اور ہم نے آپ کی طرف کتاب (یعنی قرآن) نازل کی ہے۔ ہر چیز کی وضاحت کرتا ہے

قرآن، النحل، ۱۶:ن۸۹

 

چونکہ قرآن نے مذکورہ بالا اعلان کیا ہے تو اس کا مفہوم تو یہ ہے کہ قرآن کو ایسا ہونا چاہیے کہ اس دنیا میں بنی نوع انسان کی پوری تاریخ میں، سب سے عجیب، سب سے پراسرار اور سب سے زیادہ ناقابل فہم واقعات کی وضاحت کرنے کے قابل ہوں؛ ایسے واقعات جو اب بھی سامنے آ رہے ہیں اور درج ذیل کا مشاہدہ بھی ممکن نظر آتا ہے۔:

 

بنیادی طور پر بے دین (سیکولر) یورپ کی آخرِ کار ۱۹۱۷-۱۸ میں زمین مقدس کو ’آزاد‘ کرنے میں کامیابی کا حصول؛ جو ایک مسلسل یورپی مسیحی کوششوں کے بعد حاصل ہوئی تھی؛ یہ تقریباً ہزار سال قبل صلیبی جنگوں سے شروع ہوا تھا۔

 

ایک سیکولرائزڈ اور بنیادی طور پر بے دین یورپ کیوں اور کیسے ارض مقدس کی آزادی کا جزبہ برقرار رکھا؟ آخر کیوں عیسائی یورپ ہزار سال پرانے ارضِ مقدس کو آزاد کرانے کے جنون کا تعاقب جاری رکھے گا؟ جو اس سے ہزار سال قبل عیسائیت بھی قبول کر چکے تھے۔ آخر کار یہ مسیحی مقدس سرزمین کو آزاد کرنے کی خواہش کے جنون میں کیوں مبتلا تھے

 

 قدیم ریاست اسرائیل، جسے اللہ تعالیٰ نے 2000 سال سے زیادہ عرصہ قبل تباہ کروا دیا تھا؛ کی بالآخرہزاروں سال بعد اسے بحال کرنے میں یورپین یہودی کی کامیابی۔ یہ کامیابی ایک سیکولر یورپ کی طرف سے فعال مدد کے ذریعے ممکن ہوئی۔ ایک سیکولر مسیحی یورپ کو یورپی یہودیوں کی مدد کرنے کا اتنا جنون کیوں ہو ا؟

ایک مذہبی ریاست کی بحالی جو اولا" دو ہزار سال پہلے انبیاء کے ذریعہ قائم کی گئی تھی۔ داؤد اور سلیمان علیہ السلام کے ذریعے؟ اور صرف یورپی یہودی ہی کیوں وہ یہودی ہیں جو اسرائیل کی ریاست کو بحال کرنا چاہتے تھے

 

 اسرائیل کے اصلی یہودیوں (یعنی غیر یورپی یہودیوں) کی مقدس سرزمین پر واپسی؛ وہ اللہ تعالیٰ کی طرف سے اس مقدس سرزمین سے بے دخل کر دیے گئے تھے اور 2000 سال ایک عجیب و غریب بکھرے ہوئے ڈائیسپورا کا شکار ہوئے۔

 یورپی یہودی، اصلی بنی اسرائیل یہودی کو مقدس سرزمین پر واپس لائے؛ لیکن اس کے بعد سے وہ خود مقدس سرزمین پر واپس نہیں آئے؛ وہ تو پہلے بھی کبھی بھی وہاں نہیں رہے تھے - وہ صرف مقدس سرزمین میں آباد ہوئے۔ 

 

وہ کیا وجہ رہی ہوگی کہ یورپی لوگ یہودیت اختیار کر لیں گے اور پھرمقدس سرزمین کو آزاد کرنے کے جنون میں مبتلا ہوں گے۔ اور اسرائیلی یہودیوں کو مقدس سرزمین کی طرف واپس لانے کا مشن زور زبردستی سے اپنائیں گے؛ آخر کیوں؟

یہ سب چیزیں، جو دنیا کے لیے بہت عجیب اور حیران کن دکھائی دیتی ہیں۔ لیکن زیادہ تر یہودی اسے یہودیوں کے دعوے کو سچ ثابت کرنے کے لیے درست جانتے ہیں۔ یہ ایسا ہی درست لگتا ہے کیونکہ وہ پورا کرتے نظر آتے ہیں وہ وعدہ جو یہودیوں سے کیا گیا؛ ایک خدائی وعدہ جو اللہ تعالیٰ ان کی طرف بھیجے گا۔ یعنی ایک نبی، جسے مسیح (عربی: المسیح) کے نام سے جانا جائے گا، اور کون ہوگا؟ وہ ان سب کو اوپر پہنچا دے گا یعنی ترقی دح گا اور اس سے بھی زیادہ۔

 

یہ کتاب دلیل دیتی ہے کہ قرآن نہ صرف ان عجیب و غریب واقعات کی وضاحت کرتا ہے بلکہ یہ بھی یروشلم کی آخری منزل کو ظاہر کرتا ہے۔ قرآن ایک تقدیر بتاتا ہے۔ اس یہودی دعوے کی سچائی (اوپر بیان کردہ) کے جھوٹ کو بے نقاب کرتا ہے اور حقیقی سچائی کی تصدیق کرتا ہے۔ جو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ آیا تھا۔ قرآن اس تقدیر کی گواہی دیتا ہے کہ ایسے یہودیوں کو اللہ تعالیٰ کی طرف سے تاریخ کی سب سے بڑی سزا دی جانی ہے۔

 

یروشلم اور ارض مقدس کی تقدیر کے بارے میں قرآنی نظریہ کے بالکل دل میں یہ اعلان ہے کہ جب آخری دور میں آخری الٹی گنتی یہودیوں پر گنی جائے گی۔ انہیں ڈائیسپورا سے جمع کیا جائے گا جس میں وہ ٹوٹ گئے اور منتشر ہو گئے تھے؛ اور جہاں سے انہیں بھیج نکالا جا چکا تھا؛ اور انہیں بطورِ خاص مقدس سرزمین واپس لایا جائے گا؛ ایک 'گڈ مڈ ہوئی بھیڑ' بنا کر (قرآن، بنو اسرائیل، ۱۷:۱۰۴ ،)۔ وہ وعدہ الٰہی اب پورا ہو چکا ہے۔

 

 یہودی پہلے ہی مقدس سرزمین پر واپس جا چکے ہیں اور اس پر دوبارہ اپنے حق کا دعویٰ بھی کر چکے ہیں! اسرائیل کا قیام ان کی کامیابی ہےاور اس کے ذریعے یہودیوں کو اسرائیل کی ریاست کے مذہبی جواز پر یقین کرنے پر مجبور کروایا گیا ہے۔ اسلام وضاحت کرتا ہے کہ اس اسرائیل کے پاس کوئی مذہبی جواز نہیں ہے۔ بلکہ وہ یہودیوں کو دھوکہ دیا گیا جس میں سب سے بڑا دھوکہ تاریخ نے دیکھا ہے، اور اب ان کے لیے سب سے بڑا الہی عذاب حاصل کرنے کا مرحلہ طے ہو گیا ہے جو شاید ہی کبھی بھی کسی اور قوم پر اذیت دی گئی ہو۔ لیکن اس سے پہلے کہ بنو اسرائیل پر آخری عذاب نازل ہو، بہت بڑی بات تو وہ ڈرامہ ہوگا جو ارض مقدس پر ظہور ہوگا اور جسے ابھی درحقیقت دنیا کے سامنے آنا ہے۔ یہ کتاب اس میں سے کچھ سامنے آنے والے ڈرامے کی وضاحت کرتا ہے۔

 

درحقیقت اس کتاب کا بنیادی مقصد یہ بتانا ہے کہ اسلام کا نظریہ مختلف ہے۔ تاریخی عمل اس ارض مقدس سے متعلق ہے۔ یہ وہ ہے جس میں وقت تیزی سے اسرائیل کے لیے نکلا جا رہا ہے۔ گلیلی کا سمندر جلد ہی خشک ہو جائے گا! یسوع واپس آئے گا! اور اسکی واپسی اسرائیل کی ریاست کی تباہی کا مشاہدہ کرے گی۔

 

یہودیوں کے پاس وہی دینِ حق تھا جو مسلمانوں کو بھی دیا گیا لیکن انہوں نے اسے بگاڑ دیا۔ ان کے پاس مدینہ میں کافی لمبا عرصہ وقت تھا (رسول کی ہجرت کے بعد) کہ حق کے ساتھ آنے والے قرآن میں آیا ہوا غیر فاسد سچ کو قبول کرتے اور محمد (صلی اللہ علیہ وسلم) پر ایمان لاتے جو ابراہیم علیہ السلام کے خدا کے آخری نبی تھے، لیکن انہوں نے سختی سے انکار کر دیا۔

 

تو پھر ان کے لیے وقت ختم ہو گیا جب اللہ تعالیٰ نے قبلہ بدل دیا۔ قرآن، البقرہ، ۲: ۱۴۱-۱۴۵)۔ اس کے بعد انہیں اس اجتماعی قسمت کو، جو اب انہیں ان کے چہروں پر گھور رہی ہے، ٹالنے میں بہت دیر ہو گئی۔ کسی بھی دوسرے واقعہ سے زیادہ جو تاریخ میں آشکار ہونا باقی ہے؛ وہ یروشلم کی تقدیر ہے اور وہ تقدیر جو ریاست اسرائیل کی منتظر ہے؛ اور وہ جب ظاہر ہوگی تو اسلام کی اتم سچائی کے دعوے کی توثیق کرے گا۔

 

 یروشلم فی القرآن – مسلمانوں کے لیے مضمرات

 

جو مسلمان اس کتاب کو آخر تک پڑھتے ہیں ان پر کیا اثرات مرتب ہوتے ہیں؟

 

پہلا یہ کہ یروشلم اور مقدس سرزمین ان کے دلوں میں سب سے زیادہ عزیز ہو؛ مکہ اور مدینہ کی طرح عزیز - اور ارض مقدس کو سیکولر یورپی یہودی کے چنگل سے آزاد کرانے کی جدوجہد اور ریاست اسرائیل سے نفرت سب سے زیادہ عزیز ہونی چاہیے۔

 

 اگر کوئی یہودی امریکہ یا یورپ یا روس چھوڑ سکتا ہے۔ اور اسرائیلی دفاعی فورس میں شامل ہوکر اس مسلح جبر میں حصہ لے سکتا ہے جو ارض مقدس میں مسلمان اور عیسائی فلسطینی عوام پر توڑا جا رہا ہے تو ایک مسلمان کو بھی حق ہونا چاہیے کہ دنیا میں جہاں کہیں بھی رہتا ہو اسے چھوڑنے اور مسلح افواج میں شامل ہونے کی یکساں آزادی ہو۔ تاکہ شامل ہو؛ ارض مقدس میں مظلوموں کی داد رسی میں مزاحمت کا حصہ بنے۔

 

حقیقت میں، یہ ایک کم از کم ٹھوس قدم ہوگا۔ آج کی دنیا میں مسلمانوں کے ایمان کے اظہار کے لیے کم از کم یہ اتنی خواہش تو ان کے دل میں ضرور ہونی چاہیے کہ ارض مقدس پر مسلح مزاحمت (جہاد) میں حصہ لیں۔ مسلمان کو تاہم، خبردار کیا جانا چاہئے کہ جیسے ہی وہ عوامی طور پر اپنے عقیدے کا اعلان کرتے ہیں کہ اسرائیل کی ریاست ایک مسلم فوج کے ذریعے تباہ کر دی جائے گی؛ اور اس امید کا اظہار کرتے ہوئے کسی فوج کے ممبر بنیں گے،تو ان کو ڈرایا جائے گا اور یہاں تک کہ انہیں خاموش کرنے اور انہیں ایک ایسی مثال بنانے کے لیے گرفتار کیا جائے گا اور وہ بھی اس طرح کہ جو دوسروں کو خوفزدہ کرے۔

دوسرے یہ کہ مسلم دنیا کو مالی اور دیگر وسائل کی ہدایت کی جائے۔ بنیادی طور پر طاقت سےارضِ مقدس کی آزادی کے مقصد میں مدد کرنا۔

 

تیسرا اور سب سے اہم بات یہ ہے کہ مسلمانوں (مرد کے ساتھ ساتھ خواتین کو بھی) قرآن کے پیغام کا مطالعہ کرنا چاہیے۔ اور یروشلم کی تقدیر سے متعلق رہنمائی لیں اور پھر دوسروں کو سکھائیں.

 

صیہونی یہودی حکمت عملی

 

صہیونی یہودیوں کی مجموعی حکمت عملی کی ایک جہت یہ رہی ہے کہ ایک بدعنوان، مستقل طور پر امیر، شکاری اور بے دین اشرافیہ جو اب عربوں پر مسلط ہے؛ کے ساتھ مصلحت پسندی کے اتحاد کو فروغ دینے کے ذریعے اسرائیل کے اسٹریٹجک فائدے کے ماحول کو کنٹرول کریں۔

اسرائیل کی اطراف میں؛ اسرائیل کے ارد گرد مسلم کمیونٹیز میں ایک حکمران اشرافیہ برقرار رکھا گیا ہے جو ایسے حالات کو جنم دیتے ہیں جس کے ذریعے مسلمان مجبور ہوجاتے ہیں کہ اسرائیل کے ساتھ دوستانہ تعلقات برقرار رکھا جا سکے۔ تاکہ اپنی طاقت، تسلط کی پوزیشن کو قائم رکھیں اور حکمرانی کا استحقاق اور دولت ان کے پاس رپے۔ وہ یہودی اسرائیل کی ریاست کے حامی ہیں۔ اس طرح ان حکمران اشرافیہ پر دباؤ ڈالاجاتا ہے کہ وہ مسلمانوں پر اتنا ظلم کریں کہ وہ مجبور ہو جائیں کہ اسرائیل کے سامنے سر تسلیم خم کریں؛ یا اسرائیل کی مخالفت بھی ایسی کریں جس سے یہودیوں کو کوئی خطرہ نہیں ہوگا۔

 

جب اسرائیل ارضِ مقدس اور مسلم عرب عوام پر اپنے ظلم و ستم کو بڑھاتا ہے۔ تو نتیجتا" عرب مسلمان مشتعل ہو جاتے ہیں تو حکمران اشرافیہ، اپنی بقا کی خاطر، اسرائیل کے خلاف غصے کی پوزیشن اپنانے پر مجبور ہو جاتی ہے۔ یہ یہودی عرب (اشرافیہ) کی حکمت عملی آج ایک حد تک پہنچ چکی ہے۔

عمل درآمد کے اعلی درجے کے مرحلے. … یہ ان لوگوں کی حکمت عملی ہے جو بنیادی طور پر دین ابراہیمی کے اخلاقی قلب کو ترک کر چکے ہیں ۔ صیہونی یہودی حکمت عملی کا تقاضا ہے کہ وہ ایک دن اس عرب اشرافیہ کو ترک کر دیں گے۔ درحقیقت صیہونی اس عرب اشرافیہ کو ترک کرنے کی حکمت عملی شروع کر چکے ہیں۔ یہاں تک کہ اس وقت جب ہم یہ تحریر لکھ رہے ہیں؛ اسرائیل عرب مسلمانوں کے ساتھ جنگ کی تیاری کر رہا ہے جس کا نتیجہ یہ نکلے گا کہ یہودی ریاست کے علاقے کی توسیع ہوگی اور اسرائیل پھر پورے خطے پر حکومت کرے گا۔ دنیا میں حکمران ریاست کے طور پر (یعنی ریاست ہائے متحدہ امریکہ کی جگہ حکمران ریاست)۔

 

یہودیوں کی ایسی تمام حکمت عملیوں کے جواب میں جو اللہ تعالیٰ کی بنائی تقدیر کی توہین کرنا چاہتے ہیں۔ اور جو مومنین کے بھی خلاف ہے قرآن نےاعلان کیا:

اور انہوں نے (یہودیوں نے) تدبیریں کیں اور اللہ نے بھی تدبیر کی۔ اللہ بہترین تدبیر کرنے والا اور منصوبہ ساز ہے۔"

قرآن، آل عمران، ۳: ۵۴

یہ حکمت عملی مصر، اردن، ترکی اور سعودی عرب میں کامیاب رہی۔ جو ایک بے خدا امریکہ کی کلائنٹ ریاستیں ہیں۔ لیکن یہ حکمت عملی کامیاب نہیں ہو سکی ارضِ مقدس پر؛ اور نہ ہی اسے شام اور یمن میں کامیابی ملی ہے۔

 

اس کتاب کے قارئین کو نبی کریم (صلی اللہ علیہ وسلم) کی دعا پر غور کرنا چاہیں گے۔

جس نے یوں دعا کی

 

ابن عمر رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اے اللہ! عطا کرو اپنا؛ ہمارے شام (شام) اور ہمارے یمن پر برکت ہو۔

لوگوں نے کہا: ہماری نجد (نجد وہ حصہ ہے۔ سعودی عرب جہاں سے سعودی حکمرانوں نے جنم لیا ہے)۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے پھر فرمایا: اے اللہ! ہمارے شام اور یمن پر اپنی رحمتیں نازل فرما۔

انہوں نے پھر کہا: ہمارا نجد بھی۔ اس پر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: زلزلے اور فتنے آئیں گے اور وہاں سے (یعنی نجد) آئیں گے۔ شیطان کے سر کے پہلو سے نکل آؤ۔" (صحیح، بخاری)

 

یہودی ریاست اسرائیل کے وجود کے پچاس سال مکمل ہو چکے ہیں۔ لیکن یہ کہنا ضروری ہے کہ یہ "مشکلات کے خلاف" کوئی بڑی کامیابی نہیں جیسا کہ یہودی ہمیں یقین دلائیں گے۔ ایک بنیادی طور پر بے دین صہیونی تحریک نے بنو اسرائیل کو جھوٹ کا پہاڑ بنا دیا! ایک اس طرح کا جھوٹ ایک جھوٹا نعرہ تھا " لوگوں کے بغیر ایک زمین بغیر زمین کے لوگوں کے لیے"۔

اگر عرب 'لوگ' نہیں ہیں، اگر وہ سابق اسرائیلی وزیر اعظم کے طور پر صرف 'ٹڈی' ہیں۔ جیسا کہ وزیر شمر نے ایک بار اعلان کیاتھا۔

 

کیا عربوں نے یہودیوں کو اپنے درمیان دو ہزار سال سے زیادہ رہنے کی اجازت نہیں دی؟ کیا عربوں نے یہودیوں کو جان کی اور جائیداد کی حفاظت کی ضمانت نہی دی؟ وہ ان کے درمیان عرب سرزمین میں دو ہزار سال سے زیادہ عرصے تک رہے۔ عربوں نے یہ سب کچھ ایسے وقت میں کیا جب یورپیوں نے یہودیوں کے لیے اپنے اپنے دروازے بند کر دیے تھے۔ یا ہچکچاتے ہوئے انھیں یہودی بستیوں میں رہنے کی اجازت دے دی۔ عربوں ایسا اس لیے کیا کہ یہودیوں کے پاس اب بھی ابراہیم کے مذہب کا ایک 'بقیہ' موجود تھا۔ جو حضرت اسماعیل علیہ السلام کے ساتھ ان کے پاس آئیں۔ سچ کا وہ 'بقیہ' ہی تھا جس نے انہیں مہمان نوازی سکھائی۔ آج تک عربوں کی مہمان نوازی باقی ہے۔ ابراہیم کے اسی مذہب کو ان یہودیوں کو مہمان نواز 'گھاس والے 'ٹڈی ' سے شکر ادا کرنا سیکھنا چاہیے تھا۔

صیہونیوں نے دعوی کیا کہ سچائی، جو یہودیت میں ہے، ارضِ مقدس یہودی لوگوں کو عطا کی گئی تھی۔ مقدس زمین ان کے لیے 'خصوصی'، 'ابدی' اور 'غیر مشروط' ملکیت عطا کی گئی تھی۔ یہودی دعوی کرتے ہیں کہ ریاست اسرائیل کی بحالی، جسے اللہ تعالیٰ نے تقریباً دو ہزار سال قبل تباہ کر دیا تھا؛ دراصل یہودیت کے (ایک سامراجی ورژن) سچائی کے دعوے کی توثیق کرتی ہے۔ 

  وہ کہتے ہیں کہ تورات میں یہ اعلان نہیں کیا گیا: "ہر وہ جگہ جس پر تیرا قدم چلے گا تیرا ہوگا" (استثنا، ۱۱: ۲۴:)؟

 

اسرائیل کی پیدائش کے پچاس سالوں سے دنیا دیکھ رہی ہے کہ حیرت انگیز طور پر یہودی 'قدموں' کے تباہ کن تسلسل ایک دھاگہ سے جڑے پھیلتی جارہی ہے اور اسرا ئیل کی توسیع ابھی تک ختم نہیں ہوئی ہے۔

 

اس 'ظاہر وجود' کے ساتھ جو اسرائیل ہے؛ اور جو بظاہر عرب ریاستوں کے محاصرے میں ہے؛ اور عربوں کے حملے سے اپنے آپ کو بہتر طریقے سے بچانے کے لیے اپنی سر توڑ کوششوں میں مصروف ہے۔ مگر 'حقیقت' یہ ہے کہ اس وقت جب یہ کتاب شائع ہو رہی ہے (جنین پناہ گزین کیمپ کی تباہی اور اتنے زیادہ عربوں کا ذبیحہ کے بعد) وہ اسرائیل ہے؛ جوعربوں کے خلاف ایک بڑی جنگ چھیڑنے کی تیاری میں ہے اور اس جنگ کے ذریعے سرحدوں میں ڈرامائی طور پر توسیع کرے گی اس یہودی ریاست کے مثل جو بائبل کی مقدس زمین ہے۔ یعنی، مصر کے دریا (اور اس کا مطلب نہر سویز پر کنٹرول ہے) سے دریا تک فرات (اور اس کا مطلب تمام خلیجی تیل پر ممکنہ استثناء ایران کے تیل کے کنٹرول ہے؛ یورپ، جاپان اور باقی دنیا کے بیشتر حصے کا خلیج کے تیل پر انحصار ہے)۔

 

یہ وہ جنگ ہے، جس کی منصوبہ بندی پوری احتیاط کے ساتھ کی جائے گی۔ اسرائیل خود کو امریکہ کی جگہ دنیا میں 'حکمران ریاست' کے طور پر دیکھنا چاہتا ہے اور اس طرح، بائبل کی تصدیق کرنا چاہتا ہے؛ جو مقدس ریاست کی بحالی میں ممکن ہے اور یہودیوں کی اس کامیابی میں اسرائیل یعنی یہودیوں کے کنٹرول میں یروشلم کا مقدس شہر بھی شامل ہوگا؛ اور اس سے یقینی طور پر یہودیت کے سچائی کے دعوے کو درست ثابت کرنا ہے۔

 

ہمارا سوال یہ ہے کہ یہ سب کچھ تو مسیح نے حاصل کرنا تھا سو یہ سب کچھ مسیحا کے بغیر کیسے حاصل ہوا؟ جواب یہ ہے کہ یہ ایک جھوٹے مسیحا (المسیح الدجال) کے فریب سے حاصل ہوا! یہودیوں کی اس ظاہری کامیابی یعنی بائبل والے اسرائیل کی بحالی سے ایک ناگزیر مضمرات جو پوشیدہ ہے وہ اسرائیلی یہودیوں کے اس دعوے کی توثیق ہوگا کہ علیہ السلام اور محمد صلی اللہ علیہ وسلم نعوز با اللہ دونوں دغاباز تھے ۔

 

لیکن اسرائیل کی تخلیق کے لیے، یہودیت کو اپنی ویگن کو نئی ابھرتی ہوئی معاشرت کی راہ پر چلانی پڑی جو بنیادی طور پر بے خدا اور زوال پذیر جدید مغربی تہذیب ہے۔ اس بے دین مغربی تہزیب نے دنیا کے اسٹیج پر بے مثال غالب اداکار کے طور پر اپنی اتھارٹی قائم کی۔

یہ دنیا میں؛ "ہر اونچائی سے بنی نوع انسان پر اترتی ہوئی" یا " ہر سو پھیل رہی ہے"۔ (سورۃ الانبیاء، ۲۱: ۹۶ ) تمام سمندر، زمین اور ہوا کو کنٹرول کرنے کے لیے۔

 یہودی ریاست ان پچاس سالوں میں نا صرف زندہ ہے بلکہ اس کو تقویت حاصل ہوئی ہے ایک فعال مدد سے جو اسے بے دین اور زوال پذیر مغرب نے عطا کی۔

 

وہ یہودی جو اسرائیل کی ریاست کی حمایت کرتے ہیں انہوں نے وہی کچھ ظاہر کیا جو ان کے سامنے تھا۔ یعنی بائبل کے اسرائیل کی بحالی، لیکن انہوں نے بڑی ناانصافیوں کو آسانی سے نظر انداز کر دیا جو مظلوم فلسطینی عوام ہیں جن میں عیسائی اور مسلمان دونوں شامل ہیں - اور ان پر کیا گیا ظلم؛ جن کا واحد گناہ ایسا لگتا ہے کہ وہ مقدس سرزمین (یہودیوں کی) میں ان کی رہائش ہے۔

 

وہ ناانصافی اور ظلم ان پچاس سالوں میں مسلسل بڑھ رہا ہے۔ ہمارا، ایسے یہودیوں سے سوال یہ ہے کہ کیا سچائی کا دعویٰ ایسے لوگوں سے مطابقت رکھتا ہے؟ جو بے دینی، زوال پذیری، ناانصافی، نسل پرستی اور ظلم ی راہ پر چلیں؟ اور اپنا ویگن' ایک بنیادی طور پر بے خدا ٹرین کے ساتھ جوڑیں اور پھر بھی ابراہیم کے خدا کے وفادار ہونے کا دعویٰ کرتے رہیں؟

صیہونی یہودیوں کا استدلال رہا ہے کہ انہوں نے فلسطینی عوام کو اپنے گھر سے نہیں نکالا۔ بلکہ انہوں نے خود اپنے گھروں کو چھوڑ دیا. اچھا تو پھر ان یہودیوں نے انکے گھروں کی حفاظت کیوں نہیں کی؟ ایک مقدس امانت کے طور پر؛ اور پھر انھوں نے فلسطینیوں کو اپنے گھر واپس آنے کی دعوت کیوں نہیں دی؟ اس کے بجائے یہودی پچاس طویل بدقسمت سالوں سے ہٹ دھرمی پر قائم رہے ہیں۔ اور مسلسل ان کے گھروں میں واپسی کے حق سے انکار کرتے رہے ہیں۔ اسرائیل کا ظالمانہ ظلم روز بروز شدت اختیار کرتا جا رہا ہے۔

 

اسرائیل جلد پہنچ جائے گا اپنی 'جھوٹی' شان کے عروج پر جب وہ دنیا میں حکمران ریاست بن جاتی ہے۔ تاہم، یہ کتاب اعلان کرتی ہے کہ دنیا آخر الزمان کے آغاز کا مشاہدہ کر رہی ہے۔ اسرائیل کی جاہل یہودی ریاست کا قیام! یہودیوں کو صہیونیت کو اپنی حالت زار کا ذمہ دار نہیں ٹھہرانا چاہیے۔ صیہونیت نے جو کچھ کیا وہ سادہ طور پر ہر ایک کا استحصال کرنا تھا۔ آج وہ جن حالات کا شکار ہیں خود انکا بنایا ہوا ہے؛ وہ جھوٹ ؛ جو بائبل میں ڈالا گیا تھا ان جھوٹوں کو مزید جھوٹ کے پہاڑ سے مزین کر کے۔


یروشلم‘‘ کا قرآن میں نام کے ساتھ ذکر نہیں ہے۔

 

'قرآن میں یروشلم' جزوی طور پر اخبار کے مضمون کے جواب میں لکھا گیا تھا۔ ڈینیل پائپس جو لاس اینجلس ٹائمز میں شائع ہوا تھا ("یروشلم مسلمانوں سے زیادہ یہودی سے تعلق رکھتا ہے”،۲۱ جولائی ۲۰۰۰ عیسوی)۔ اس میں اس نے کسی بھی اسلامی دعوے کو مسترد کرنے کی کوشش کی۔ یروشلم کو یہودیوں کا یروشلم کا اعلان کرتے ہوئے، دوسری چیزوں کے ساتھ یہ لکھا کہ: "یہ ایک بار بھی قرآن میں یا عبادات میں مذکور نہی ہے..." ڈاکٹر پائپس اور ان کے میڈیا سروگیٹس، نے ہمیں جواب دینے کے لیے اکسایا، اگر وہ کبھی اس کتاب کو پڑھتے تو اپنی رائے پر نظر ثانی کرتے۔

 

درحقیقت ایک مسلمان کا فرض ہے کہ وہ ایسے مخالف نقادوں کا جواب دے جو اسلام اور قرآن کو چیلنج کرے اور اس پر قائم رہے۔ اور خاص طور پر جب وہ مساعی نئی صلیبی جنگ کے حوالے سے یہودی ریاست اسرائیل کے حق میں کی گئی ہو۔ جواب ہمیشہ قرآن میں موجود حق کے ذریعے دیا جانا چاہیے۔

 

قرآن کہتا ہے کہ جب حق پھینکا جاتا ہے؛ باطل کے مقابلے میں، توحق ہمیشہ باطل کو شکست دے گا۔ اور مومنین کو تو کفار کے خلاف زبردست جدوجہد کرتے ہوئے قرآن کو استعمال کرنے کا حکم دیا گی ہے۔

اس بات سے قطع نظر کہ ڈاکٹر پائپس ’ یروشلم فی القرآن ‘ کو قبول کرتے ہیں یا نہیں۔ ۔ اسرائیل اور اسلام کا مسئلہ قرآن سے واضح ہے کہ اس موضوع کا مطالعہ فہم کے لیے بنیادی ہے۔ اور یہی اس کتاب کی بنیادی اہمیت ہے۔


یروشلم - آج کی دنیا کو سمجھنے کی کلید

 

اب یہ واضح ہوجانا چاہیے کہ یہ موضوع ان تمام لوگوں کے لیے خاص طور پر اہم ہے جو مسلمانوں کی طرف سے یروشلم کے معاملے میں تیزی سے تیار ہونے والے خوفناک ڈرامے پر تبصرہ کرنا چاہتے ہیں یا اس کا جواب دینا چاہیے۔

 

 بہت پہلے ۱۹۷۴ میں ڈاکٹر کلیم صدیقی مرحوم، بانی صدر لندن مسلم انسٹی ٹیوٹ فار ریسرچ اینڈ پلاننگ نے اس مصنف پر اس موضوع پر کتاب لکھنے پر زور دیا۔ واضح طور پر اس کتاب کے ذریعے ظاہر ہو کہ یروشلم کلید ہے اور اس تاریخی عمل کو سمجھنے کے لیے جیسا کہ یہ آج خود بخود ظاہر ہو رہا ہے۔

 اس کتاب سے نکلنے والا قرآنی نظریہ واضح طور پر ثابت کرتا ہے کہ کسی کو بھی جدید دنیا کو صحیح معنوں میں سمجھنا ممکن نہیں ہے اگر وہ آج کے یروشلم کی حقیقت کو اس دور میں اہم نہی جانتا۔ اور اس کی بابت علم نہی رکھتا۔

 

جدید مغرب چاہتا ہے کہ ایک ایسا اسلام اختیار کیا جائے جو دیگر چیزوں کے ساتھ ساتھ، یہودی ریاست اسرائیل کو ایڈجسٹ کریں اور مسلمانوں کے لیے اسے قبول کرنے کی راہ ہموار کریں۔ اور اس کے ساتھ صلح کرلیں. اس کتاب نے مغرب کے ہدف کے مطابق؛ اُس حکمت عملی کا اسلامی ردعمل فراہم کیا ہے۔ ایک ایسا ردعمل جو مضبوطی سے قرآن اور حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی احادیث پر مبنی ہو۔

اس کتاب نے انکشاف کیا ہے کہ یروشلم میں کیا ہوگا؟ نبی محمد (صلی اللہ علیہ وسلم) کے سچے پیروکاروں اور یہودی ریاست اسرائیل کے درمیان مستقبل میں کبھی بھی صلح نہیں ہو گی اور یہ بھی سچ ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پیروکار آخرکار فتح حاصل کریں گے۔ اور ظالم اسرائیل کے ظلم سے القدس کو آزاد کروائیں گے۔

 

ان تمام مضامین میں سے سب سے اہم جو قرآن میں زیر بحث ہیں جن کو پڑھایا جانا ضروری ہے۔ اسلامی تعلیمی اداروں میں آج ’قرآن میں یروشلم‘ کا موضوع ضرور ہونا چاہیے۔ یہ ہے وہ موضوع جو کسی بھی دوسرے سے زیادہ اہم ہے جس کا مسلمان کامیابی سے جواب دے سکتے ہیں۔

 

بے دین دنیا کا موجودہ حملہ ایسا ہے جو مسلمان کے ایمان پر اسرائیل کو ایڈجسٹ کرنے کی طرح کی ترمیم کرنے پر مجبور کرے گا۔ پروفیسر ڈاکٹر اسماعیل راجی فاروقی، ممتاز فلسطینی عالم اسلام کو اس لیے قتل کر دیا گیا کہ وہ اسرائیل کے لیے کانٹا تھے۔ اسرائیل کی مخالفت میں مسلمانوں کو صیہونیت کے خطرے سے خبردار کیا تھا۔

 

"اسرائیل کا مسئلہ جس کا آج مسلم دنیا کو سامنا ہے، اسلامی تاریخ میں اس کی نہ تو نظیر ملتی ہے اور نہ ہی اس کی مثال ملتی ہے۔ مسلم دنیا نے اسے جدید دور کی ایک استعمار، یا بہترین طور پر، صلیبی جنگوں کی تکرارکی مثال کے طور پر دیکھا ہے۔ دونوں مین کچھ زیادہ فرق نہیں ہے بلکہ شاید اسرائیل ان میں سے ایک، یا دونوں ہے اورشاید زیادہ ہی ہے؛ بد قسمتی سے بہت زیادہ۔ بدقسمتی سے اس موضوع پر اسلامی ادب میں کچھ زیادہ مواد بھی نہی ہے۔ اس مسئلے کے ایسے تجزیے کی بہت زیادہ ضرورت ہے؛ اس موجودہ لمحہ میں یہ مسئلہ عرب دنیا کو بالخصوص اور مسلم دنیا کو بالعموم دعوت دیتا ہے۔  اور یہ مسئلہ ہے کہ اسرائیل کو ایشیا-افریقہ میں مسلم ممالک کے ایک اٹوٹ رکن کے طور پر قبول کرلیا جائے"۔

('اسلام اور اسرائیل کا مسئلہ'، اسلامک کونسل آف یورپ، لندن، 1980۔ ISBN 0 907163 025)

ڈاکٹر فاروقی کا خیال تھا کہ اسرائیل مسلمانوں کے لیے بہت زیادہ خطرہ ہے۔ قرون وسطیٰ کے یورو عیسائی صلیبی جنگوں سے لاحق خطرے سے زیادہ، یا جدید سیکولر دور کی یورو کالونیلزم کی طرح ہے؛ اس لیے انہوں نے اس کال کو مسترد کر دیا جو اسرائیل کو ایشیا افریقہ' میں مسلم ممالک کی دنیا کا اٹوٹ رکن تسلیم کروانا چاہتا ہے۔ 

اس کتاب نے ڈاکٹر فاروقی کے کام کی تکمیل کی ایک عاجزانہ کوشش کی ہے۔ خاص طور پر مسلم اساتذہ کو یروشلم سے متعلق قرآنی رہنمائی فراہم کرتا ہے۔

 

یروشلم اور اس کی تقدیر

 

 قرآن میں یروشلم‘‘ کا موضوع مسلمانوں کے لیے اہم تو ہے ہی مگر اس کتاب کی ایک کوشش یہ ہے کہ یہودیوں اور عیسائیوں تک قرآن کو پہنچانے میں خاص طور پر دلچسپی رکھتے تھے۔ جیسے جیسے وقت گزرتا جا رہا ہے، اور آخری گھڑی قریب آتی جا رہی ہے، یہ اور زیادہ اہمیت کا حامل ہوتا جا رہا ہے۔

 

عیسائی اور یہودی اسکالرشپ کے لیے قرآن و احادیث کا جواب دینا زیادہ مشکل ہے۔ اس کتاب کے موضوع کے ساتھ ساتھ یاجوج و ماجوج؛ (جھوٹا) مسیحا؛ اور عیسیٰ (علیہ السلام) کی واپسی وغیرہ بھی اہمیت کے حامل معاملات ہیں۔ اور جن کی بابت ثبوت قرآن کی سچائی کی تصدیق ہوتی جا رہی ہے۔ مسلمانوں کا فرض ہے کہ وہ اس موضوع کو یہود و نصاریٰ کے سامنے پیش کریں اور ہم نے اس کتاب کے ذریعے اپنا فرض ادا کا ہے۔

 

اس کتاب میں ایسا کیا

 

اس کتاب نے دو مختلف یہودیوں کے درمیان فرق کیا ہے۔ ایک ہیں بنی اسرائیل؛ یہ وہ یہودی ہیں، جنہوں نے اپنا نسب باپ ابراہیم (صلی اللہ علیہ وسلم) سے لگایا۔ اور یہ ہیں سامی لوگ جن کی عربوں سے نسلی وابستگی بالکل واضح ہے۔ دوسری جانب، نیلی آنکھوں والے سنہرے بالوں والے یورپی ہیں جنہوں نے ایک وقت میں یہودیت اختیار کر لی تھی اور جو ابراہیم (علیہ السلام) سے اس طرح کے نزول میں شریک نہیں ہیں۔

 

اس مصنف کی رائے میں اور اللہ بہتر جانتا ہے کہ یہ صیہونی دراصل یاجوج ماجوج ہیں۔ یقینی طور پر ایسے یورپی یہودیوں کی صفوں میں ہی کہیں موجود ہیں " یاجوج و ماجوج"۔ اور انہوں نے ہی عیسائی یورپی تہذیب کو الٹ دیا ہے اور اسے موجودہ دور کے لاخدائی تہذیب میں تبدیل کر دیا۔ یاجوج ماجوج نے صیہونی تحریک اور اسرائیل کی ریاست قائم کی۔

 

اس حقیقت میں کوئی سوال نہیں ہو سکتا کہ یہ کتاب نفسیاتی طور پر مغربی، عیسائی، یہودی اور یہاں تک کہ کچھ مسلمان قارئین کے لیے بھی چونکانے والی ہو گی۔ لیکن ہم یہ صاف اور واضح کر دیں کہ ہم نے یہ کتاب اپنے قارئین کو ناراض کرنے کے لیے نہیں لکھی ہے۔ آج کی دنیا کی ’اندرونی حقیقت‘ جیسا کہ قرآن کے ذریعے سمجھا جاتا ہے، ایسے لوگوں کی 'خارجی صورتوں' سے بالکل مختلف ہے جو فیصلوں کی تشکیل دینے والے ہیں۔ دیکھنے والوں کے ادراک میں دنیا کا فرق ہے؛ ایسی دو آنکھیں، بیرونی اور اندرونی سے دیکھنے والے اور جو صرف ایک آنکھ سے دیکھتے ہیں (کیونکہ وہ اندرونی طور پر نابینا ہیں)۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے خبردار کیا کہ دورِ دجال میں جو جھوٹے مسیحا کا زمانہ ہوگا اور جس میں 'ظہور' یعنی ظاہرا" جو دکھے گا اور 'حقیقت' یعنی اس کا باطن جو نہی دکھے گا، ایک دوسرے سے بالکل مختلف ہوں گے۔ کوئی بھی آخری زمانے میں 'اندرونی' نظر کا حامل نہی ہوگا؛ دیکھ ہی نہیں سکے گا اور حقیقت میں گھس نہیں سکے گا سوائے ان لوگوں کے علاوہ جو وفاداری کے ساتھ پیغمبر محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی پیروی کرتے ہونگے۔

  ہم اعتماد کے احساس کے ساتھ کہہ سکتے ہیں کہ کم از کم کچھ یہودی ایسے ہوں گے جو اس کتاب کو پڑھ کر ارض مقدس میں رونما ہونے والے واقعات کو جیسا کہ قرآن وضاحت کرتا ہے، تسلیم کریں گے اور انشاء اللہ قرآن کی حقانیت کے قائل ہوں گے اور اس کے نتیجے میں حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کو ابراہیم علیہ السلام کے خدا کا سچا نبی تسلیم کریں۔

 

تشریح و توضیح


ہم نے کبھی کبھی کسی متن (قرآن) کی خود تشریح کی ہے جب ایسی عبارت جس کی براہ راست وضاحت نہیں کی گئی، نہ تو اللہ حکیم کی کتاب میں یا اس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم سے منسوب اس بارے میں بیان موجود ہو۔ ہم نے اپنے موضوع کی قرآنی وضاحت تلاش کرنے کے لیے ایسا کیا۔ جب ہم نے ایسا کیا، تو ہم نے ان لوگوں کے خلاصہ کو مسترد کرتے ہیں جنہوں نے اس مقدس نصوص کی کوئی براہ راست اور لغوی معنی کے علاوہ کوئی بھی تشریح نہیں…ہم ان لوگوں کو جو ہماری تاویلات کو رد کرتے ہیں کو دعوت دیتے ہیں کہ وہ اپنی 'وضاحت' پیش کریں جس میں قرآن کی القدس زمین پر یہودیوں کی واپسی کی ’’وضاحت‘‘ موجود ہو۔

 

دوسری بات یہ کہ جب ہم کسی قرآنی عبارت کی تشریح کرتے ہیں تو ہم ہمیشہ اس شرط کے ساتھ کرتے ہیں کہ اللہ تعالیٰ بہتر جانتا ہے!


یروشلم اور قرآن کا دعویٰ حق

 

علم کی سیکولرائزیشن کے اس دور میں یہ بالکل غیر فیشن زدہ ہو گا کہ ابراہیم (علیہ السلام) کے خدا کے نازل کردہ کلام کا سہارا لے کر آج کی دنیا کی وضاحت کریں. لیکن اس کے باوجود یہ بالکل ایس ہی ہوا ہے جو اسرائیل کی ریاست قائم ہوئی اور جدید دنیا میں ابھرا۔ یورپی صیہونی یہودیوں نے مقدمہ کی بحث کے لیے تورات کا جو ایک الہامی خدا کی کتاب ہے، کا استعمال کیا۔ ان کے 'خدا کے عطا کردہ' حق کو بحال کرنے کے لیے القدس زمین پر قبضہ کرکے ریاست اسرائیل کا قیام؛ جو سب سے پہلے حضرت داؤد علیہ السلام نے قائم کی تھی۔ 

اسرائیل کے پہلے یورپی وزیر اعظم ڈیوڈ بن گوریون نے کافی واضح طور پربات کی؛ "بائبل ریاستِ اسرائیل کے لیے ہمارا حق دلیل ہے"۔

اس لیے ہم یہودی اسرائیل کے قیام کے جواز پرجواب دینے کی پیشکش میں خصوصی طور پر قرآن سے ماخوذ جواب دینے میں حق بجانب ہیں۔

 

جیسا کہ آج تاریخی عمل اس تاریخ کے آخری مرحلے میں سامنے آرہا ہے؛ اور یہ بالکل ایسا ہے جیسا کہ قرآن تیزی سے دنیا اور یروشلم کو درست طریقے سے بیان کررہا ہے۔ آج کے حالات قرآن کے حق پر ہونے کے دعوے کی توثیق کرے گا۔ اس کتاب میں کسی بھی چیز سے زیادہ قرآن کا دعویٰ پیش کیا گیا ہے کہ یہ حق ہے۔

 

یہ بالکل ویسا ہی ہو رہا ہے جو خود کتاب مین بیان ہوا ہے۔ ایک سورۃ اعلان کرتا ہے؛ جسے الفصلات- واضع کر دیا گیا؛ کا نام دیا گیا ہے۔

" عنقریب ہم اپنی نشانیاں انہیں کائنات میں دکھائیں گے اور خود ان کے نفس میں یہاں تک کہ ان پر واضح ہو جائے گا کہ وہی حق ہے، کیا ان کے رب کی یہ بات کافی نہیں کہ وہ ہر چیز کو دیکھ رہا ہے۔

خبردار! انہیں اپنے رب کے پاس حاضر ہونے میں شک ہے، خبردار! بے شک وہ ہر چیز کو گھیرے ہوئے ہے۔

قرآن، الفصلات ۴۱: ۵۳-۵۴

 

یروشلم، جو مسلمانوں، عیسائیوں اور یہودیوں کے لیے مقدس شہر ہے، اس کا مقدر ہے کہ یہ زمین تاریخ کے اختتام کے تمام کرداروں میں سب سے اہم ہے۔ اسلام، عیسائیت اور یہودیت؛ سب نے اس پر اتفاق کیا ہے۔ جو روحانی بصیرت کے حامل ہیں اور جن کی نظر با برکتوں والی ہے (یعنی جو دو آنکھوں سے دیکھتے ہیں، ظاہری اور باطنی) ان کے لیے نشانیوں کی کثرت ہے، ان کو صاف نظر آتا ہے کہ ہم اس آخری دور میں زندہ ہیں، وہ دور جو تاریخ کے خاتمے کا گواہ ہوگا۔

 

اس موضوع پر قرآنی نقطہ نظر کو دوبارہ پیش کیا جانا انتہائی ضروری ہے۔ ایک بار پھر اس وقت جب سے یروشلم نے پہلے ہی وہ 'کردار' ادا کرنا شروع کر دیا ہے جو اس کی تقدیر ہے؛ سو یہ کتاب اس 'کردار' کی وضاحت کرتی ہے۔ یہ بھی اہم ہے کہ یروشلم کا ’کردار‘ ’’تاریخ کے اختتام‘‘ کی اتنی ہی بدیہی روحانی بصیرت کے ساتھ وضاحت کی جانی چاہیے؛ جتنی ممکن ہے کیونکہ وہ 'کردار' اکثر اوقات صرف اسی طرح قابل فہم ہوتا ہے۔

 

ہمارا مقصد یقیناً عام پڑھنے والوں کو مخاطب کرنا تھا۔ یہ خاص طور پر ہے۔ ان کے لیے ضروری ہے کہ وہ یروشلم اور مقدس سرزمین کی قرآن اور حدیث پاک - رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد؛ کے تحت تقدیر سے واقف ہوں۔ یہ اس لیے بھی ضروری ہے کہ یروشلم سے متعلق حریف دعووں کو جس کا ہر ایک اعلان کرتا ہے؛ کی حقیقت کو جاننے کے لیے۔ یروشلم کا مقدر ہے کہ وہ حق کے اپنے خصوصی دعوے کی توثیق کرے اور باقی سب کو باطل کرے۔

 

اس کا مطلب یہ ہے کہ یہودی یروشلم کی تقدیر پر یقین رکھیں اور مسیحا کی آمد کا مشاہدہ کریں۔ جب مسیحا آئے گا تو وہ یہودیت کے سنہری دور کو بحال کرے گا۔ اور وہ یروشلم سے دنیا پر حکومت کرے گا۔ ایسا ہونا اس کی تصدیق کرے گا جو یہودی دعویٰ کرتے ہیں اور ان کے حریفوں کے دعووں کو باطل کرے گا۔

 

عیسائیوں کے پاس بھی ایسا ہی یقین ہے۔ جب یسوع مسیح واپس آئے گا، وہ یروشلم سے دنیا پر حکومت کرے گا۔ اور وہ تثلیث، اوتار، کفارہ وغیرہ کے عیسائی عقیدوں کی توثیق کرے گا۔ کیا مسیحی دعویٰ سچائی کی تصدیق ہو جائے گی اور باقی سب باطل ہو جائیں گے؟

 

 مسلمان بھی مانتے ہیں کہ یروشلم کی ایک ایسی تقدیر ہے جو اسلام کے حق کے دعوے کی توثیق کرے گی۔ لیکن وہ موجودہ عیسائی اور یہودی دعووں کو باطل کرتا ہے۔ یہ تین متحارب تصورات ہیں اور یہ تمام وہ سچائی ہیں جو ابراہیم علیہ السلام سے شروع ہونے والی دین کا دعویٰ کرتے ہیں۔ اتنے گہرے اختلافات ہیں تو ممکنہ طور پر یہ سب سچ تو نہیں ہو سکتے۔

 

مسلمانوں کا نظریہ، جیسا کہ اس کتاب میں ابھرتا ہے، یہ ہے کہ حضرت عیسیٰ (علیہ السلام) جو 'سچا' مسیحا ہیں؛ ایک دن زمین پر دوبارہ زندہ آئیں گے۔ وہ یروشلم جائے گے اور حکیمون عادل (ایک 'عادل حکمران') کے طور پر دنیا پر حکومت کریں گے؛ "شادی کریں گے، بچے ہوں گے اور مر جائیں گے"۔ مسلمان اس کی میت پر نماز ادا کریں گے اور اسے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس دفن کیا جائے گا۔ محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے شہر مدینہ" عرب میں جہاں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم مدفون ہیں۔ جب وہ عیسیٰ علیہ السلام واپس آئے گا "صلیب" ٹوٹ جائیں گے، اور یہ صلیب کا مذہب عیسائیت کا خاتمہ ہو گا۔ اور وہ خنزیر کو مار ڈالے گا"۔

 

ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”اس ذات کی قسم جس کے ہاتھ میں میری جان ہے،ابنِ مریم جلد ہی آپ کے درمیان ایک عادل حکمران کے طور پر اتریں گے۔ وہ صلیب کو توڑ دے گا اور مار ڈالے گا۔ خنزیر اور جزیہ کو ختم کرنا (ایک تعزیری ٹیکس جو یہودیوں اور عیسائیوں پر مسلط ہے اسلام کے زیر تسلط علاقہ میں)۔ پھر مال کی فراوانی ہوگی اور کوئی خیرات؛ تحائف قبول نہیں کرے گا۔" (صحیح بخاری)

 

لفظ 'سور' کی لفظی تشریح نہیں کی جا سکتی کیونکہ اس کی جو تشریح ہوتی ہے؛ متن کے سیاق و سباق میں فٹ نہیں ہے۔ شاید لفظ 'سور' کا استعمال انتہا کی طرف اشارہ کرتا ہے جو الہی غصہ ہو۔ یہ کتاب سوال پیدا کرتی ہے: وہ خنزیر کون ہیں جن کو مارا جائے گا؟ مسیحا جب واپس آئے گا؟ مسیحا کس سے اتنا ناراض ہو گا؟ جس نے کوشش کی؛ اسے مصلوب کرنے کے لیے؟

 

مسلمانوں کے پاس اس لمحے کی صحیح معلومات ہیں "جب حضرت عیسیٰ علیہ السلام، مسیحا، واپس آئے گا۔ یہ تب ہو گا جب گلیلی میں سمندر میں پانی ہو گا۔ تقریباً سوکھ گیا، یا مکمل سوکھ گیا “ ۔ یہ اسی وقت ہوگا جب اللہ مسیح ابن مریم کو بھیجے گا۔ وہ دمشق کے مشرقی جانب سفید مینار پر اترے گا۔ زعفران سے ہلکے رنگے ہوئے دو لباس پہنے ہوئے اور دو فرشتوں کے پروں پر ہاتھ رکھ کر۔ جب وہ اپنا سر نیچے کرے گا تو وہاں گر جائے گا۔ اس کے سر سے پسینے کی موتی نکلتی ہے اور جب وہ اسے اٹھاتا ہے تو موتیوں کی طرح موتیوں کی مالا اس سے بکھر جاتی ہے۔ ہر کافر جس نے اپنے بدن کی بدبو سونگھی وہ مر جائے گا اور اس کی سانس دور تک پہنچے گی۔ جیسا کہ وہ دیکھ سکتا ہے۔ پھر وہ اس (دجال) کو تلاش کرے گا یہاں تک کہ وہ اسے لد کے دروازے پر پکڑ لے گا۔ اور اسے قتل کر دیتا ہے۔ پھر ایک قوم جن کی حفاظت اللہ نے کی تھی عیسیٰ کے بیٹے کے پاس آئے گی۔ مریم، اور وہ ان کے چہروں کو پونچھیں گے اور انہیں جنت میں ان کے درجات سے آگاہ کریں گے۔ اس کے تحت ہوگا۔

ایسے حالات کہ اللہ تعالیٰ یسوع پر یہ الفاظ ظاہر کریں گے: میں ان میں سے پیدا کیا گیا ہوں۔ میرے بندو ایسے لوگ جن سے کوئی لڑنے کی طاقت نہیں رکھتا۔ آپ ان لوگوں کو محفوظ طریقے سے لے جائیں۔ طور کی طرف، پھر اللہ یاجوج ماجوج کو بھیجے گا اور وہ ہر ڈھلوان سے نیچے اتریں گے۔ ان میں سے پہلا ٹبریاس کی جھیل سے گزرے گا اور اس میں سے پیے گا۔ اور جب ان میں سے آخری گزر جائے گا، وہ کہے گا: یہاں کبھی پانی تھا۔ (صحیح مسلم)

 

بحیرہ گیلیلی (بصورت دیگر جھیل ٹبریاس یا جھیل کنیرٹ کہا جاتا ہے) میں پانی کم ہے۔ آج تاریخ میں پہلے سے کہیں زیادہ اسعمال ہورہا ہے، اور وہ پانی مسلسل کم ہو رہا ہے کیونکہ اسرائیل کی یورو-یہودی حکومت اس سے زیادہ پانی نکال رہی ہے جتنا کہ قدرت واپس سمندر میں نہیں رکھ سکتی ۔ یہ سمجھنا اتنا آسان ہے۔ جب پانی خشک ہو جائے اور پینے کا پانی بھی باقی نہ رہے۔ صیہونی یہودی آخر کار اپنے عروج پر پہنچ جائیں گے۔ عربوں کو مقدس سرزمین پر یہودیوں کی حکمرانی کے تابع کرنے کے لیے مجموعی حکمت عملی۔ وہ ان کی عبادت اللہ کی عبادت کے بجائے جھوٹے مسیح کی عبادت پر دلالت کرے گی۔ اعلی ڈی سیلینائزیشن سے پانی حاصل کرنے کے لیے انہیں ایسا کرنے کی ضرورت ہوگی ان پودوں کے لیے جو اسرائیل اگائے گا۔ عرب اتنے غریب ہوں گے کہ پینے کا پانی خریدنے کی استطاعت نہیں رکھتے ہونگے۔

 

یہ کتاب یہ واضح کرتی ہے کہ یہودیوں کو آخر الزمان کے لیے باقی وقت کی پیمائش کے لیے کیا کرنا پڑے گا؟ ان کو آخری تباہی کے لیے گلیلی کے سمندر میں پانی کی سطح کا مشاہدہ کرنا ہے۔ اس کے خشک کرنے کا بندوبست۔


(یہ کتاب اسلامک بک ٹرسٹ سے منگوائی جا سکتی ہے ibtkl@pd.jaring.my)


0
334
Unraveling Morphea: Affected Regions and Distinctive Traits

Unraveling Morphea: Affected Regions and Distinctive Traits

defaultuser.png
Laiba Rafiq
1 month ago
Dhuven Ki Tehreer By Ibn e Safi Ep 2 -- Bangbox Online

Dhuven Ki Tehreer By Ibn e Safi Ep 2 -- Bangbox Online

defaultuser.png
Bang Box Online
2 months ago
Empowering Women's Health and Well-being Through Ayurvedic Wisdom

Empowering Women's Health and Well-being Through Ayurvedic Wisdom

defaultuser.png
Ghulam Hussain
6 months ago
Quick and Effective Home Workouts for Busy Schedules

Quick and Effective Home Workouts for Busy Schedules

1695384419.jpg
Rehan
4 months ago
KALIMA TAYYIBA; Calligraphy Islamic Art

KALIMA TAYYIBA; Calligraphy Islamic Art

defaultuser.png
Muhammad Asif Raza
2 months ago