یروشلم فی القرآن؛ از شیخ عمران این حسین اردو ترجمہ: باب چہارم
Muhammad Asif Raza 3 months ago
Muhammad Asif Raza #education

یروشلم فی القرآن؛ از شیخ عمران این حسین اردو ترجمہ: باب چہارم

اسرائیل فلسطین تنازعہ تقریبا سو سال پرانا ہے اور حالیہ پیش رفت صرف اس کا پیش خیمہ ہے جس کی منصوبہ بندی بہت پہلے کی گئی تھی۔ شیخ عمران این حسین نے تقریباً دو عشرے قبل کتاب " یروشلم فی القرآن" لکھی تھی اور انہوں نے کہا کہ یہ کتاب آج سے قبل نہیں لکھی جا سکتی تھی، کیونکہ یہ صرف پچھلے چند سالوں میں یہودیوں کے پوشیدہ منصوبوں نے ان حالات کو واضع کیا ہے۔ آج تو حالات اس قدر واضح طور پر سامنے ہیں کہ بہت کم لوگ اس بات پر شک کر سکتے ہیں کہ دنیا پر تسلط کے لیے یہودیوں نے منصوبہ بنا رکھا ہے۔ صیہونی یہودیوں کے غلبہ میں ڈوبے میڈیا کی طرف سے پھیلائے جانے والے پروپیگنڈے پر متبادل رائے کے لیے ہم یہاں اس کتاب کے اردو ترجمہ کا باب چہارم " قرآن نے اعلان کیا کہ مقدس سرزمین، بشمول یروشلم، اسرائیلیوں کو دیا گیا تھا " کو بینگ باکس آن لائن کے قارئین کے لیے پیش کر رہے ہیں۔

 

یروشلم فی القرآن؛ از شیخ عمران این حسین اردو ترجمہ

حصہ اول

باب چہارم

 

قرآن نے اعلان کیا کہ مقدس سرزمین، بشمول یروشلم، اسرائیلیوں کو دیا گیا تھا

 

 

 

"یاد کرو موسیٰ نے اپنی قوم سے کہا تھا: اے میری قوم! تم پر اللہ کا احسان یاد کرو جب اس نے تمہارے درمیان نبی پیدا کیے، تمہیں بادشاہ بنایا اور تمہیں وہ دیا جو اس نے لوگوں میں سے کسی دوسرے کو نہیں دیا تھا۔

"اے میری قوم! اُس مقدس سرزمین میں داخل ہو جاؤ جو اللہ نے تمہیں دی ہے اور حقارت سے پیچھے نہ ہٹو۔ کیونکہ تب تم خود ہی تباہ ہو جاؤ گے۔"

(قرآن، المائدہ، 5:20-1)

 

ڈینیل پائپس، لاس اینجلس ٹائمز میں شائع ہونے والے اپنے مضمون میں ('یروشلم کا مسلمانوں سے زیادہ یہودیوں سے تعلق ہے۔ 21 جولائی 2000 )، یروشلم پر اسلامی دعوے کو مسترد کرنے کی کوشش میں اعلان کرتے ہوئے، دوسری چیزوں کے علاوہ یہ لکھا کہ: "یہ یروشلم کی عبارت کا ایک بار بھیی قرآن میں ذکر نہیں ہے۔ "

 

یہ درست ہے کہ لفظ ’’یروشلم‘‘ کا قرآن میں واضح طور پر ذکر نہیں آیا، لیکن یہ کسی خدائی حکمت کے نتیجے میں ظاہر ہوتا ہے۔ قرآن نے ایک پر اسراری طریقے میں یروشلم کا حوالہ دیا ہے۔ پراسرار طریقے سے (اور مناسب طور پر) ایک ایسے شہر کے طور پر جو تباہ کیا گیا تھا؛ اور اس کے لوگوں کو نکال دیا گیا، اور اس پر دوبارہ دعوی کرنے کے لیے واپس آنے پر پابندی لگا دی گئی۔ پابندی اس وقت تک نافذ رہے گی کہ جب ایک وقت جب یاجوج ماجوج نکلے ہونگے (دیکھئے قرآن، الانبیاء، 21:95-6۔)

 

احادیث میں یروشلم کا عربی نام بیت المقدس متعدد بار آیا ہے۔ رومن نام ایلیہ کا نام بھی نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی ایک بہت اہم پیشین گوئی میں آتا ہے۔

 

یہ واقعی حیرت انگیز ہے کہ ڈاکٹر پائپس کو ان آیات کو نظر انداز نہیں کرنے کا انتخاب کیا۔ قرآن نے واضح طور پر اعلان کیا کہ مقدس سرزمین ( جس کا یروشلم

بہت دل ہے) اللہ تعالیٰ نے یہودیوں کو دیا تھا۔ جب موسیٰ علیہ السلام نے اسرائیل کے لوگوں کو مصر کی غلامی سے نکالا، اور وہ معجزانہ طور پر مصر سے سمندر کے پارعبور کر گئے اور سینا میں داخل ہوئے، تو موسیٰ علیہ السلام نے ان سے خطاب کیا اور انہیں حکم دیا کہ مقدس سرزمین پر کنٹرول حاصل کرنے کی کوشش کرو۔ فرمایا:

 

’’اے میرے لوگو، اُس مقدس سرزمین میں داخل ہو جاؤ جو اللہ نے تمہیں دیا ہے، اور مت مڑو واپس (چونکہ یہ آپ کے ایمان کے ساتھ خیانت ہوگی) کیونکہ تب آپ کھو جائیں گے ( مقدس سرزمین کا نقصان بھی شامل ہے)۔ "انہوں نے جواب دیا: اے موسیٰ، اس سرزمین میں ظالم لوگ رہتے ہیں، اور ہم اس میں داخل نہ ہوں جب تک کہ وہ اس سے نکل نہ جائیں۔ اگر وہ چلے گئے تو ہم اس میں داخل ہو جائیں گے۔ ( یہاں مزید دیکھیں 13:32-33)۔

 

"پھر دو خدا ترس آدمیوں (توریت کے مطابق یشوع اور کالب) بولے۔ اللہ کی طرف سے برکت تھی: دروازے سے ان پر داخل ہونا (یعنی سامنے سے حملہ کرنا) کیونکہ اگر تم اس سے داخل ہو تو دیکھو! آپ فتح یاب ہوں گے۔ پس اگر تم (اللہ پر) بھروسہ رکھو بے شک مومن ہیں۔" (قرآن، المائدہ، 5:21-23)

 

یہودیوں نے موسیٰ (علیہ السلام) کو ایسا جواب دیا جو بہت توہین آمیز تھا۔ کہ اللہ تعالیٰ نے فوری طور پر ان کا ارض مقدس میں داخلہ ممنوع قرار دے دیا۔

 انہوں نے کہا: اے موسیٰ! جب تک وہ لوگ اس ( مقدس سرزمین) میں ہیں ہم ہرگز کبھی وہاں داخل نہیں ہوں گے، پس تم اور تمہارا رب (ایک ساتھ) جاؤ اور جنگ کرو، ہم تو یہیں بیٹھے ہیں۔

(موسٰی علیہ السلام نے) عرض کیا: اے میرے رب! میں اپنی ذات اور اپنے بھائی (ہارون علیہ السلام) کے سوا (کسی پر) اختیار نہیں رکھتا پس تو ہمارے اور (اس) نافرمان قوم کے درمیان (اپنے حکم سے) جدائی فرما دے

(ربّ نے) فرمایا: پس یہ ( مقدس سرزمین) ان (نافرمان) لوگوں پر چالیس سال تک حرام کر دی گئی ہے، یہ لوگ زمین (سینائی) میں (پریشان حال) سرگرداں پھرتے رہیں گے، سو (اے موسٰی! اب) اس نافرمان قوم (کے عبرت ناک حال) پر افسوس نہ کرنا

(قرآن، المائدہ، 5:24-6)

 

قرآن نے درحقیقت دوسری جگہ اس اعلان کی تصدیق کی کہ مقدس سرزمین یہودیوں کو دیا گیا تھا۔

پھر (فرعون نے) ارادہ کیا کہ ان کو (یعنی موسٰی علیہ السلام اور ان کی قوم کو) سر زمینِ (مصر) سے اکھاڑ کر پھینک دے پس ہم نے اسے اور جو اس کے ساتھ تھے سب کو غرق کردیا۔

 اور ہم نے اس کے بعد بنی اسرائیل سے فرمایا: تم اس ملک میں آباد ہو جاؤ پھر جب آخرت کا وعدہ آجائے گا (تو) ہم تم سب کو اکٹھا سمیٹ کر لے جائیں گے۔

(قرآن، بنو اسرائیل، 17:103-104)

 

اور ایک بار پھر:

اور ہم نے اس قوم (بنی اسرائیل) کو جو کمزور اور استحصال زدہ تھی اس سرزمین کے مشرق و مغرب (مصر اور شام) کا وارث بنا دیا جس میں ہم نے برکت رکھی تھی، اور (یوں) بنی اسرائیل کے حق میں آپ کے رب کا نیک وعدہ پورا ہوگیا اس وجہ سے کہ انہوں نے (فرعونی مظالم پر) صبر کیا تھا، اور ہم نے ان (عالیشان محلات) کو تباہ و برباد کردیا جو فرعون اور اس کی قوم نے بنا رکھے تھے اور ان چنائیوں (اور باغات) کو بھی جنہیں وہ بلندیوں پر چڑھاتے تھے

(قرآن، الاعراف، 7:137)

 

مجھے ایک بار پھر حیرت ہوتی ہے کہ یہودی اور صیہونی اسکالرشپ نے ان صریح اقوال کا نا مطالعہ کیا اور حوالہ دینے سے گریز کیا۔ جن میں قرآن نے مقدس زمیں کو یہودیوں کو دینا قرار دیا ہے:

 

اے میری قوم اُس مقدس سرزمین میں داخل ہو جاو جو اللہ نے تمہیں دی ہے۔‘‘

 "پھر ہم نے بنی اسرائیل سے کہا: تم (مقدس) زمین میں امن سے رہو۔" ۔

 "ہم نے ان کی وراثت کے طور پر (مقدس) سرزمین کے مشرقی اور مغربی حصے دیے۔ کہ ہم نے برکت دی تھی۔"

 

ہمارے قارئین جو یروشلم کی تقدیر کے موضوع کے سلسلے میں خلوص نیت سے حق کی تلاش کرتے ہیں۔ ان کو اس ہچکچاہٹ پر غور کرنا چاہیے کہ آخر کیوں یورو یہودی، صیہونی اس معاملے میں اسرائیلی تحقیق پر قرآن کا حوالہ دینے سے گریز کرتے ہیں۔ یہ کتاب انکے اس عجیب رویے کی ایک وضاحت پیش کرتی ہے۔ انکی بیزاری کی وضاحت کی وجہ تورات میں خداوندِ کریم کی بیان کردہ سچائی کو مسخ کرنا ہے او وہ تھی شرائط جو اللہ تعالیٰ نے مقدس سرزمین کی وراثت کے لیے مقرر کیا تھا۔ دوبارہ لکھی گئی تورات میں فراڈ کیا گیا تھا جسے قرآن نے بے نقاب کردیا ہے۔ سو آخر وہ فراڈ دھوکہ کیا تھا؟

 

(۔ ibtkl@pd.jaring.my یہ کتاب اسلامک بک ٹرسٹ سے منگوائی جا سکتی ہے)


0
257
Home-based Business Opportunities || Bang Box Online Official

Home-based Business Opportunities || Bang Box Online Official

defaultuser.png
Bang Box Online
7 months ago
Dhuven Ki Tehreer By Ibn e Safi Ep 3 -- Bangbox Online

Dhuven Ki Tehreer By Ibn e Safi Ep 3 -- Bangbox Online

defaultuser.png
Bang Box Online
2 months ago
Breaking the Silence: Postpartum Depression Awareness

Breaking the Silence: Postpartum Depression Awareness

defaultuser.png
Laiba Rafiq
5 months ago
Rosalite Anti-Redness Cream: Soothing Sensitive Skin and Restoring Radiance

Rosalite Anti-Redness Cream: Soothing Sensitive Skin and Restoring Rad...

defaultuser.png
Ghulam Hussain
6 months ago
Sharjah Museum of Islamic Civilization

Sharjah Museum of Islamic Civilization

defaultuser.png
Ayesha Arshad
5 months ago